Maulana Hamid Mohammad Khan, Amir of Jamaat-e-Islami Hind Telangana extends his Eid-ul-Adha greetings to the general Muslims

Maulana Hamid Mohammad Khan, Amir of Jamaat-e-Islami Hind Telangana extends his Eid-ul-Adha greetings to the general Muslims اردو میں پڑھیں

There is no deed dearer in the sight of Allah than sacrifice on the day of Eid-ul-Adha.

Eid-ul-Adha is currently being celebrated all over the world under difficult circumstances. In his press statement on this occasion, Maulana Hamid Mohammad Khan, Amir of Jamaat-e-Islami Hind, Telangana, sincerely congratulated all Muslims on the occasion of Eid and said that Qurbani is the Sunnah of Prophet Ibrahim (PBUH) and is a great act of worship. It is also a great source to seek Allah’s pleasure. In the sight of Allah, there is no deed that is more beloved than sacrifice in the days of Eid, so all those who can afford it should offer it. Maulana Hamid Mohammad Khan expressed the belief that inshallah this Eid will prove to be blessed for the muslim ummah, the country and the whole world. He further said that in the current situation of the country and the world, this Eid-ul-Adha sends a message to all Muslims that they should not limit it to mere animal sacrifice but should always be ready to sacrifice everything for Islam. This spirit of sacrifice will in fact give new life to the Ummah and through it they will be able to cope with all kinds of situations. On this occasion, Maulana wished all Muslims to take special care of cleanliness and hygiene while sacrificing animals and not to create any difficulties for the neighbors and passers-by so that the true image of Islam is presented to the people. Amir-e-Halqa prayed that Allah Almighty grant the Hajj pilgrims the honor of acceptance of their deeds and grant them the status of Hajj Mabroor and And may Allah accept the deeds and prayers and act of sacrifice of Muslims all over the Islamic world. And may Allah end this pandemic with His special grace.

Press Secretary

Read More

عامۃ المسلمین کو امیرحلقہ جماعت اسلامی ہندتلنگانہ مولانا حامدمحمدخان کی جانب سے عیدالاضحی کی مبارک باد

بسم اللہ الرحمن الرحیم
PRESS NOTE 
30-07-2020
 
عامۃ المسلمین کو امیرحلقہ جماعت اسلامی ہندتلنگانہ مولانا حامدمحمدخان کی جانب سے 
عیدالاضحی کی مبارک باد
اللہ کے نزدیک قربانی و الے ایام میں قربانی سے بڑھ کر محبوب عمل کوئی نہیں۔ 
 
عیدالاضحی اس وقت سارے عالم میں سخت حالات کے دوران منائی جارہی ہے۔ اس موقع پر اپنے صحافتی بیان میں مولانا حامدمحمدخان امیرحلقہ جماعت اسلامی ہند تلنگانہ نے تمام مسلمانوں کو عید کی پرخلوص مبارکباد پیش کرتے ہوئے کہا کہ قربانی اللہ کے نبی حضرت ابراھیم علیہ السلام کی سنت ہے اور ایک عظیم الشان عبادت ہے۔یہ اللہ تعالیٰ کی رضا کا بہت بڑاذریعہ بھی ہے۔ اللہ کے نزدیک قربانی و الے ایام میں قربانی سے بڑھ کر محبوب عمل کوئی نہیں چنانچہ ان تمام افراد کو قربانی کرنی چاہئے جو اس کی استطاعت رکھتے ہوں۔ مولانا حامدمحمدخان نے اس یقین کا اظہارکیا کہ ان شاء اللہ یہ عید‘ ملت اسلامیہ‘ ملک اور سارے عالم کے لیے مبارک ثابت ہوگی۔ آپ نے مزید کہا کہ ملک وعالم اسلام کے موجودہ حالات میں یہ عید قرباں تمام مسلمانوں کو یہ پیغام دیتی ہے کہ وہ محض جانوروں کی قربانی ہی تک اس کو محدود نہ سمجھیں بلکہ اسلام کے لیے اپنی ہر چیز کوقربان کرنے کے لیے ہمیشہ تیار رہیں۔یہی جذبہ قربانی دراصل امت کو نئی زندگی عطا کرے گااور اسکے ذریعہ ہرقسم کے حالات کا مقابلہ کرسکیں گے۔مولانا نے اس موقع پرتمام مسلمانوں سے خواہش کی کہ جانوروں کی قربانی کرتے ہوئے صفائی ونظافت کا خاص خیال رکھیں اور پڑوسیوں وراہگیروں کے لیے کسی بھی قسم کی مشکلات پیدا نہ کریں تاکہ اس سے اسلام کی صحیح تصویر لوگوں کے سامنے آئے۔امیرحلقہ نے دُعا فرمائی کہ اللہ تعالیٰ حجاج کرام کے حج کو اپنی بارگاہ میں شرف قبولیت عطا فرماکرحج مبرور کا درجہ عطا فرمائے اورتمام عالم اسلام کے مسلمانوں کی عبادتوں،دُعاؤں اورقربانی کے عمل کوقبول فرمائے۔اس وقت دنیاجس طرح وباء کا شکار ہے اللہ تعالیٰ اپنے خاص فضل وکرم سے اس وباء کا خاتمہ فرمائے۔ 
 
    پریس سکریٹری
Read More

سکریٹریٹ میں شہید مساجد کی دوبارہ اسی مقام پر تعمیرکا مطالبہ

پریس نوٹ

سکریٹریٹ میں شہید مساجد کی دوبارہ اسی مقام پر تعمیرکا مطالبہ

چیف منسٹر اپنی خاموشی توڑیں، حکومت جلد اسی مقام پر فوری تعمیر کاواضح اعلان کرے

مولاناحامدمحمدخان امیر حلقہ جماعت اسلامی ہند‘حلقہ تلنگانہ

مولاناحامدمحمدخان امیر حلقہ جماعت اسلامی ہند‘حلقہ تلنگانہ نے اخبارات کے لیے جاری ایک بیان میں ریاستی حکومت سے پرزور مطالبہ کیاکہ سکریٹریٹ کے احاطے میں مسجد ہاشمی اورمسجددفاترمعتمدی کے اُسی مقام پروقت کے تعین کے ساتھ از سر نو تعمیر کا باضابطہ اعلان کرے۔امیرحلقہ نے کہا کہ وزیر اعلیٰ چندرشیکھرراؤ اس معاملے میں اپنی خاموشی توڑیں اور سکریٹریٹ کی شہیدکردہ مساجدکو دوبارہ اُسی مقام پر تعمیرکا فوری اعلان کریں۔ان دومساجد کی شہادت اورایک مندرکے انہدام کووزیر اعلیٰ نے ایک اتفاقی حادثہ قراردیتے ہوئے واقعہ کی سنگینی کوکم کرنے کی ناکام سیاسی کوشش کی ہے۔اور اس سلسلے میں ان کی جانب سے زبانی افسوس کا اظہار اور اُسی مقام پر حکومتی خرچ پر تعمیر کا زبانی وعدہ کسی سیاسی بیان سے زیادہ کچھ نہیں ہے اورمسلمانوں کے نزدیک اس کی کوئی اہمیت نہیں ہے۔مولانا حامد محمدخان نے کہا کہ نئے سکریٹریٹ کے نقشہ میں ان مساجد اورمندرکی کوئی نشاندہی نہیں کی گئی ہے۔مسلمانوں کے تمام تنظیموں اورعلماء مشائخین کے مطالبہ کے باوجودریاستی حکومت نے اس افسوس ناک واقعے کے تدارک کے لیے کوئی واضح تیقن نہیں دیا ہے۔امیرحلقہ نے کہا کہ مسلمان اس وقت سخت صدمہ کی حالت میں ہیں اور یہ صدمہ گذرتے وقت کے ساتھ مزید گہرا ہوتا جائے گا۔ محترم حامدمحمدخان نے کہا کہ حکومت پریہ بات واضح رہنی چاہئے کہ جس زمین پر مسجد تعمیرکی جاتی ہے وہ تاقیامت مسجد ہی رہتی ہے۔اسے نہ کسی مقام پر منتقل کیا جاسکتا ہے اور نہ کوئی زمین اس کا نعم البدل ہوسکتی ہے۔مسجد کی زمین کوکسی کو دینے کا نہ وقف بورڈ اور نہ مسلمانوں کواختیار حاصل ہے۔امیرحلقہ نے مطالبہ کیا کہ مسلمانوں کے جذبات واحساسات اور مساجد کے تقدس اوران کی اہمیت کے پیش نظرریاستی حکومت فوری وقت کے تعین کے ساتھ اسی مقام پران مساجد کی تعمیراپنے خرچ پر کروانے کا واضح اعلان کرے۔اورعوام میں اپنی گرتی ساکھ کو بحال کرے۔ساتھ ہی نئی عمارت کے نقشہ میں ان مساجدکی اسی مقام پر نشاندہی بھی کی جائے۔یہی حل ریاست تلنگانہ کی روایتی مذہبی رواداری کی بقا اورحکومت کی سیکولر پالیسی کی بھی علامت ہوگی۔ مولانا حامدمحمدخان نے کہا کہ حکومت اگر اس فیصلہ میں ناکام ہوجاتی ہے تو پھر عوام کے پاس جمہوری وآئینی طریقوں کو اپناتے ہوئے احتجاج کے علاوہ کوئی چارہ نہیں ہوگا۔

پریس سکریٹری

Read More

Demand for re-construction of Shaheed Mosque on the same site at the Secretariat.

Press note

Demand for re-construction of Shaheed Mosque on the same site at Secretariat. – اردو میں پڑھیں

“Chief Minister should break his silence, let the government make a clear announcement of immediate construction of mosque at the same place” – Maulana Hamid Mohammad Khan Ameer of Jamaat-e-Islami Hind, Telangana.

Maulana Hamid Mohammad Khan, Ameer of Jamaat-e-Islami Hind Telangana, in a statement issued to newspapers, urged the state government to formally announce the reconstruction of Hashmi Mosque and Masjid Daftar-e-Mutamdi in the Secretariat premises. Chief Minister Chandrasekhar Rao should break his silence on this issue and immediately announce the reconstruction of the Secretariat’s martyred mosques on the same site. The Chief Minister termed the martyrdom of these two mosques and the demolition of a temple as an accident and made a failed political attempt to reduce the seriousness of the incident. In this regard, his verbal regret and verbal promise to build on the same site at the expense of the government is nothing more than a political statement and it is of no importance to Muslims.

Maulana Hamid Mohammad Khan said that in the new Secretariat map no mention has been made of these mosques and temples. Despite the demands of all Muslim organizations and Ulema-e-Mashaikhs, the state government has not given any clear assurances to rectify this tragic incident. Muslims are in state of severe trauma and this trauma will only get deeper with time. Mr. Hamid Mohammad Khan said that it should be clear to the government that the land on which the mosque is built remains a mosque till day of judgment (Qayamat). It cannot be moved to any place and no land can be a substitute for it. Neither the Waqf Board nor the Muslims have the authority to give it. He demanded that in view of the sentiments and feelings of Muslims and the sanctity and importance of mosques, the state government should immediately announce the construction of mosques at the same place at its own expense and restore its declining reputation among the people.

At the same time, these mosques should be identified at the same place in the map of the new secretariat building. This solution will also be a symbol of the survival of the traditional religious tolerance of the state of Telangana and the secular policy of the government. Maulana Hamid Mohammad Khan said that if the government fails in this decision then the people will have no choice but to protest by adopting democratic and constitutional methods.

Press Secretary

Read More